269

پشاور میں ہندو برادری کی دیوالی تقریب

خیبر پختونخوا حکومت کی طرف سے پشاور میں سرکاری طور پر ہندو برادری کے تین تہوار لوہڑی، شیوراتری اور دیوالی کی مشترکہ تقریب نشتر ہال میں منعقد کی گئی جس میں ڈپٹی سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی محمود جان، اراکین صوبائی اسمبلی روی کمار اور وزیر زادہ سمیت مسیحی، بہائی، مسلمان اور ہندو برادری کے رہنماؤں نے شرکت کی۔ تقریب کیلئے صوبہ بھر سے ہندو برادری کو مدعو کیا گیا تھا۔ اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ڈپٹی سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی محمود جان نے کہا کہ اقلیتوں کے حقوق ادا کرنا خیبر پختونخوا حکومت کی اولین ترجیح ہے یہ خطہ اتنا ہی اقلیتی برادری کا بھی ہے جتنا کہ مسلمانوں کا ہے حکومت ہر صورت اقلیتوں کے حقوق کا دفاع کریگی اقلیتی رکن صوبائی اسمبلی روی کمار نے کہا کہ ہندو برادری سمیت تمام اقلیتیں پاکستان میں محفوظ ہیں پاکستان کو بدنام کرنے والوں کے سازش ناکام ہوگی بھارت میں اقلیتوں کا جو حال ہے وہ سب کے سامنے ہیں
ایم پی اے وزیر زادہ نے کہا کہ صوبائی حکومت اقلیتی نواجونوں، بیواؤں اور بچوں کیلئے خصوصی منصوبے شروع کر رہی ہے پہلے سے موجود وسائل بھی اقلیتوں کیلئے برائے کار لائے جائیں گے جبکہ نئے منصوبوں پر بھی کام جاری ہے۔دیوالی، لوہڑی اور شیوراتری کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ہندو برادری کے رہنماؤں نے ضلعی اقلیتی کمیٹیوں کی بحالی کا مطالبہ کر دیا۔ اقلیتی رہنما ہارون سربدیال نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ایک چھت تلے سب مذاہب کا یکجا ہونا اس بات کی دلیل ہے کہ پاکستان میں تمام مذاہب ایک ساتھ ہیں ہندو، سکھ ، مسیحی، بہائی اور مسلمان اپنے تہوار دنیا بھر میں مناتے ہیں۔ ہندو مذہب کے تین تہواروں کی تقریب کا آغاز پراتھنا سے کیا گیا جس کے بعد مذہبی گیت بھی پیش کئے گئے نوجوانوں نے ہندو مذہب کے روایتی گیت پر رقص پیش کر کے سماں باندھ دیا جبکہ پاکستان کیلئے قربانی دینے والے شہیدوں کو خراج تحسین پیش کرنے کیلئے خصوصی نغمہ بھی پیش کیا گیا تقریب میں کوہاٹ سے آنے والی طالبات نے بھی پرفارمنس پیش کی ۔

Share this story
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں